خواتین کے بالوں کی اقسام اور انکی حفاظت

مصنف: مسز ثمینہ پروین | موضوع: حُسن کی نگہداشت


ہر خاتون کے بال الگ قسم کے ہوتے ہیں،دراصل بالوں کی قسم کا انحصار خواتین کی جسمانی صحت، موسمی اثرات،موروثیت اور بالوں کی دیکھ بھال پر ہوتا ہے،آ ئیے ہم دیکھتے ہیں کہ بالوں کی مختلف اقسام کون کون سی ہیں اور ان کی حفاظت کے لئے آپ کو کیا طریقہ اختیار کرنا چاہیے۔

چکنے بال

چکنے بال عموما چکناہٹ سے بھرے ہوئے ہوتے ہیں اور ہاتھ لگانے سے چپچپا ہٹ سی محسوس ہوتی ہے۔یہ غدور کے زیادہ چکنائی پیدا کرنے کی وجہ سے چکنے نظر آئے ہیں۔چکنے بال گردوغبار اور مٹی کو اپنے اندر کھینچ لیتے ہیں اور جلد میلی ہو جاتی ہے جس سے آپکی شخصیت شدید متاثرہوتی ہے۔

چکنے بالوں کی حفاظت

چکنے بال چونکہ جلدی گندے ہو کر آپ کے حسن کو متاثر کرتے ہیں لہذا اپنے بالوں کی صفائی پر خصوصی توجہ دیں۔

1۔ بازار میں لیموں کے عرق یا آملہ سے بنے شمپو دستیاب ہیں،ان میں سے کسی اچھی کوالٹی کے شمپو کا انتخاب کیجیے اور ہفتے میں کم از کم دو دفعہ استعمال کیجیے۔چونکہ لیموں اور آ ملے کی یہ خصوصیت ہے کہ وہ بالوں پر جمع چکنائی اور گندگی کو فوری صاف کرتے ہیں لہذا چکنے بالوں کے لئے یہ انتہائی مفید اور کار آمد ثابت ہو سکتے ہیں۔

2۔ تھوڑے سے نیم گرم پانی میں انڈے ملا کر پھینٹ لیں۔اس کو سر پر لگا کر خوب مالش کریں۔آدھے گھنٹے بعد سر کو دھو لیں اور بالوں کو کھلا چھوڑ کر نارمل ہوا میں خشک ہونے دیں۔چکنے بالوں کے لئے یہ نسخہ انتہائی مفید اور کارآمد ہے جسے ہفتے میں ایک دفعہ ضرور کریں۔

3۔ کنگھی یا برش کرتے وقت اس بات کو یاد رکھیں کہ کنگھی صرف بالوں میں کریں۔سر کی جلد پر کرنے کی ضرورت نہیں اور وقفے وقفے سے کنگھی کو کسی کپڑے یا شمپو سے صاف کرتی رہیں تاکہ ایک دفعہ نکلی ہوئی چکنائی اور میل دوبارہ بالوں میں نہ لگے۔

خشک بال

خشک بال دیکھنے میں کھردرے،بے رونق اور پھیکے لگتے ہیں،ان کے کنارے عموما مٹر ے ہوئے ہوتے ہیں اور یہ بغیر چمک کے ہوتے ہیں۔ایسے بال عموما زیادہ عمر کی خواتین کے ہوتے ہیں۔اس طرح کے بالوں کی حامل خواتین کے سر میں خشکی بھی زیادہ ہوتی ہے۔ایسے بال کسی خاص بیماری،بچے کی پیدائش،غیر متوازن غذا کے استعمال یا خشکی کی وجہ سے بھی ہو سکتے ہیں۔

خشک بالوں کی حفاظت

خشک بال بھی چونکہ خواتین کے حسن کی جاذبیت کو شدید متاثر کرتے ہیں لہذا انکی خصوصی دیکھ بھال اور توجہ کی ضرورت ہوتی ہے۔کیونکہ خشک بال ذرا سی بے اختیاری سے زیادہ خراب ہو سکتے ہیں جس کے لئے خصوصی علاج کرانا پڑتا ہے۔

1۔خشک بالوں کی حامل خواتین کو چاہیے کہ وہ ہفتے میں کم از کم ایک دفعہ تیل سے بالوں کا مساج ضرور کریں اور کچھ دیر اس کوبالوں میں لگا رہنے دیں۔اس کے بعد کسی اچھے شیمپو سے بال دھو لیں لیکن انہیں خشک کرتے ہوئے تولیے سے زیادہ نہ رگڑیں۔مساج کے لئے سرسوں کا یا زیتون کا تیل استعمال کریں اور ہاتھوں کی بجائے انگلیوں کی مدد سے مساج کریں اس کام کے لئے اگر آپ کو کسی کی مدد میسر آ جائے تو بہت بہتر ہے۔

2۔گیلے بالوں کو ہیئر ڈرائیر سے خشک کرنے کی کوشش نہ کریں بلکہ پنکھے کی ہوا یا قدرتی ہوا سے خشک ہونے دیں۔اس طرح بال اپنی ضرورت کی نمی بر قرار رکھیں گے۔

3۔بالوں کے لیے ہفتے میں ایک بار خشکی دور کرنے والا اچھا سا شیمپو ضرور استعمال کریں،لیکن یاد رہے کی شیمپو کا حد سے زیادہ استعمال بالوں کے لئے مضر ہے۔

4۔بالوں کے لئے برش یا کنگھی موٹے دندانوں والی استعمال کریں کیو نکہ چھوٹے دندانوں کی وجہ سے بال گرنے یا اکھڑنے کا احتمال ہوتا ہے۔

5۔ گیلے بالوں میں کنگھی یا برش استعمال نہ کریں کیونکہ گیلے بالوں میں برش کرنے سے بال ٹوٹ جاتے ہیں اور اس کی وجہ سے بالوں کی جڑوں کو بھی نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے۔

6۔ خشک بالوں کی حامل خواتین کو چاہیے کہ وہ اپنے بالوں کو دھوپ کی تمازت سے بچائیں کیونکہ سورج کی گرمی سے بال روکھے ہو جاتے ہیں اور ان میں موجود نمی کو شدید نقصان پہنچتا ہے۔

نارمل بال

اگر سر میں موجود سپیشیس گلینڈیز قدرتی تیل نارمل مقدار میں خارج کریں تو بال نہ تو زیادہ خشک دکھائی دیتے ہیں اور نہ ہی زیادہ چکنے،ایسے بال دیکھنے میں بہت خوبصورت اور بھلے محسوس ہوتے ہیں اور خواتین کے حسن کو جلا بخشتے ہیں۔ایسے بالوں میں قدرتی چمک ہوتی ہے۔

نارمل بالوں کی حفاظت

نارمل بالوں کی حامل خواتین کو بالوں کی حفاظت کے لئے خاص فکرمند ہونے کی ضرورت نہیں ہوتی لیکن ایسے بالوں کی قدرتی صحت کو برقرار رکھنے کے لئے بالوں کی عام حفاظت کے اصولوں کو مدِ نظر رکھنا انتہائی ضروری ہوتا ہے تا کہ یہ خراب نہ ہوں اور ان کا قدرتی رنگ اور چمک دمک زیادہ عرصے تک بر قرار رہے۔

1۔ نارمل بالوں کو ہفتے میں ایک دفعہ ضرور شیمپو کریں لیکن شیمپو کا انتخاب سمجھداری سے کیا جائے ۔اشتہارات دیکھیں ضرور لیکن ان کی باتوں کو حرفِ آخر ہر گز نہ سمجھیں۔

2۔نارمل بالوں کو زیادہ دھونا مناسب نہیں ہوتا کیونکہ اس طرح بالوں کی قدرتی چکنائی اور چمک متاثر ہوتی ہے اور وہ خشک محسوس ہوتے ہیں۔

3۔ نارمل بالوں کو دھوپ اور گرمی سے بچائیں کیونکہ دھوپ سے بھی بال بے رنگ اور روکھے محسوس ہوتے ہیں۔

پھولے ہوئے کھردرے بال

بعض خواتین کے بال کھردرے اور پھولے ہوئے ہوتے ہیں،ایسا زیادہ تر ان خواتین میں دیکھنے میں آتا ہے جو اپنے بال سمیٹنے کی بکھیر دیتی ہیں جس سے ان کا سربھی بڑا بڑا دکھائی دیتا ہے۔

پھولے ہوئے بالوں کی حفاظت

1۔ایسے بالوں کی حامل خواتین کو چاہیے کہ وہ بالوں کو ڈائے یا بلیچ کم سے کم کریں۔کیونکہ بالوں کی قدرتی صحت کو بر قرار رکھنے کے لئے یہ نہایت ضروری ہے کہ ان پر کیمیکل کم سے کم استعمال کیے جائیں۔

2۔ ایسے بالوں کے لئے مناسب ہیئر ڈریسنگ ضرور کروائیں تا کہ بالوں کی سیٹنگ بر قرار رہے،بالوں کی سیٹنگ اپنے قدوقامت اور چہرے کی مناسبت سے کریں۔

3۔ پھولے ہوئے بالوں کے لئے ہیئر سیٹنگ لوشن یا ہیئر سپرے استعمال کریں تا کہ آپ انہیں اپنی پسند کے مطابق ترتیب دے سکیں۔

ایسے بالوں کو ہفتے میں دو یا تین دفعہ شیمپو کریں تا کہ وہ صاف ستھرے رہیں۔

بے رونق اور کمزور بال

بعض خواتین کے بال بے رونق ہوتے ہیں اور کمزور ہونے کی وجہ سے اکثر گرتے رہتے ہیں جو کہ ایسی خواتین کے لئے سخت پریشانی کا باعث بنتے ہیں۔اس کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں مثلا

1۔ غیر متوازن اور چٹ پٹی غذا کا زیادہ استعمال۔

2۔ذہنی و جذباتی دباؤ ،تفکرات اور پریشانیاں۔

3۔غیر معیاری شیمپو کا استعمال۔

4۔خوشبودار تیل کا استعمال۔

5۔بالوں کو سخت صابن سے دھونا۔

بےرونق اور کمزور بالوں کی حفاظت

یہ اکثر دیکھا گیا ہے کہ خواتین ڈائیٹگ کی وجہ سے کھانے پکانے میں سستی برتنے کی وجہ سے اپنی خوراک کا مناسب خیال نہیں رکھتیں۔ یا چٹ پٹی اور بازاری نا خالص غذا استعمال کرتی ہیں،جس کی وجہ سے بال بے رونق نظر آتے ہیں۔غذاؤں کے استعمال میں ان کے تازہ اور موافق ہونے کا خیال رکھیے۔کھانا ہمیشہ مقررہ وقت پر ہی کھائیں۔آپ کی خوراک میں آئرن اور وٹامن کا فی مقدار میں ہونا چاہیے۔تازہ پھلوں اور سبزیوں کے استعمال کے علاوہ مچھلی اور گوشت بھی مناسب مقدار میں ضرور استعمال کریں۔

خوشبودار تیل کے استعمال سے قطعی پرہیز کردیں،صابن سے بالوں کو ہر گز نہ دھوئیں کیونکہ صابن سے آپ کے بال خشک، کمزور اور بے رونق ہو سکتے ہیں۔

اسی طرح جیسے پہلے بیان کیا گیا ہے کہ شیمپو کے استعمال میں انتہائی احتیاط برتیں کیونکہ اشتہار میں نظر آنے والا ہر شیمپو معیاری نہیں ہوتا اور ہو سکتا ہے کہ وہ آپ کے بالوں سے مطابقت بھی نہ رکھتا ہو۔شیمپو کرتے وقت بالوں کو ہتھیلیوں سے مت رگڑئیے بلکہ انگلیوں کی پوروں سے تین چار منٹ تک مساج کیجئے پھر بالوں کو پانی سے خوب دھوئیں جب تک کہ شیمپو کی تمام جھاگ آپ کے بالوں سے نکل نہ جائے۔کبھی بھی شیمپو کی باقیات کو بالوں میں نہ رہنے دیجئے۔یہ خشک ہو کر بالوں کے لئے انتہائی خطر ناک ثابت ہو سکتے ہیں۔

خوش باش رہیے،حسد، فکر اور پریشانیوں سے خود کو بچائیے اس طرح کرنے سے نہ صرف آپ کے بالوں کی صحت بہتر ہو گی بلکہ آپ کا جسم بھی صحت مند ہو گا اور آپ پر کشش شخصیت کی مالک ہونے کی وجہ سے زندگی کی دوڑ میں اوروں سے آگے ہوں گی۔

Add Your Thoughts